جواں سالہ لڑکی نے کیوں موت کو گلے لگا لیا۔کیا وجہ بنی۔۔؟

Oct 14, 2021 | 10:03:AM
برطانوی، لڑکی، خودکشی
کیپشن: خودکشی کرنیوالی برطانوی لڑکی ایملی اووین

(مانیٹرنگ ڈیسک) برطانیہ میں ایک  افسوسناک واقعہ پیش آیا جہاں 19 سالہ ویٹریس  نے کورونا میں تنہائی کے خوف سے خودکشی کرلی، اس انتہائی اقدام سے قبل  اپنی فیملی کے نام ایک خط لکھا جس میں اس نے درخواست کی کہ ”میرے خودکشی کرنے پر آپ لوگ شرمندہ مت ہونا‘‘۔

امریکی اخبار نیو یارک ٹائم کے مطابق ایک برطانوی لڑکی 19 سالہ ایملی اووین  نے کورونا وائرس سے الگ تھلگ ہونے سے خوفزدہ ہوکر خودکشی کی کوشش کی ، جس کے بعد وہ ہسپتال میں دوران علاج انتقال کر گئی۔  ڈیلی دی سن کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ لندن سے 100 میل شمال میں کنگز لن سے تعلق رکھنے والی 19 سالہ ویٹریس ایملی اوون  اتوار کو ایک ہسپتال میں دم توڑ گئیں جب وہ  کورونا کے درمیان تنہائی کے "ذہنی صحت کے اثرات" کے خوف سے اپنی جان لینے کی کوشش کر رہی تھی۔ ایملی اس خوف میں مبتلا ہو گئی تھی کہ اب وہ کبھی باہر نہیں جا سکے گی اور کام نہیں کر سکے گی۔ وہ پوری دنیا کے بند ہو جانے کے صدمے میں مبتلا تھی۔وہ اپنی تمام تر منصوبہ بندیاں منسوخ ہو جانے پر شدید ذہنی دباؤ کا شکار ہو گئی تھی۔ جس پر اس نے اپنے کمرے میں پھندہ لے کر اپنی زندگی ختم کر لی۔رپورٹ کے مطابق 18 مارچ کو ایملی اوون نے رشتہ داروں کو خبردار کیا کہ وہ عالمی وبائی مرض کے دوران "اپنی دنیا بند ہونے ، منصوبے منسوخ ہونے اور اندر پھنس جانے" سے نمٹنے سے قاصر ہیں۔

ایملی اوون کی بہن ، اینابیل نے کہا کہ اس کا خاندان نقصان سے "بالکل تباہ ہوگیا"۔21 سالہ اینابیل اوون نے ایک فیس بک پوسٹ میں لکھا ، "ایملی خود کورونا وائرس کے بارے میں بہت فکر مند تھی لیکن تنہائی کے ذہنی صحت کے اثرات اور نامعلوم کے خوف کے بارے میں زیادہ فکر مند تھی۔اس کی بہن نے بتایا کہ اوون کو چار سال قبل  آٹزم" کے مرض کی تشخیص ہوئی تھی اور وہ فٹ ہونے کے لئے جدوجہد کر رہی تھی۔انہوں نے لکھا ، "وہ نہیں چاہتی تھیں کہ کسی کو معلوم ہو ، لیکن اب وہ چلی گئی ہیں ہم لوگوں کو یہ بتانا چاہتے ہیں کہ آٹزم ہر شکل اور سائز میں آتا ہے۔ایملی کی موت کے بعد اسکی سہیلیاں غم میں ڈوبی ہوئی ہیں اور انہوں نے پوسٹ شئیر کرتے ہوئے لکھا ہے کہ "ہم دل شکستہ ہیں کہ ہم اسے اپنے دروازوں سے ہوا کے طوفان کی طرح دوبارہ نہیں دیکھیں گے ، یا اس کی مخصوص ہنسی نہیں سنیں گے۔" "وہ ہماری ٹیم کا ایک بڑا حصہ تھی اور ہم اسے بہت یاد کریں گے۔ایملی اوون جب صرف 12 سال کی تھی تو اس نے ایک اعضاء کے عطیہ دہندہ کے طور پر  اپنا نام رجسٹر کروایا۔ اس کے جسم کے اعضاء چار لوگوں کو عطیہ کیے گئے ہیں ، جن میں تین بچے بھی شامل ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: موسم نے لی انگڑائی۔۔۔ رات کو کہاں موسم سرد ہوگا۔۔ جانئے