سینٹ۔۔ اپوزیشن کے احتجاج کے باوجود بجلی کی پیداوار، ترسیل اور تقسیم کی ریگولیشن میں ترمیم کا بل منظور 

Jul 16, 2021 | 20:40:PM
سینٹ۔۔ اپوزیشن کے احتجاج کے باوجود بجلی کی پیداوار، ترسیل اور تقسیم کی ریگولیشن میں ترمیم کا بل منظور 

 (24نیوز)سینٹ میں اپوزیشن کے احتجاج کے باوجود بجلی کی پیداوار، ترسیل اور تقسیم کی ریگولیشن میں ترمیم کا بل منظور کرلیا گیا۔

جمعہ کو سینٹ کے اجلاس میں نیپرا بل پیش کیا گیا جس کو ایجنڈا میں شامل نہ کئے جانے پر اپوزیشن نے شدید احتجاج کیا۔بل میں کہا گیا کہ صارفین کے مفاد میں نیپرا بجلی کی ترسیل سے وابستہ پبلک سیکٹر لائسنس یافتہ کمپنی کے لئے یکساں ٹیرف مقرر کرے گی۔بل میں کہا گیا کہ منظور شدہ ٹیرف یا یکساں ٹیرف کے حوالے سے نوٹی فیکشن 30 روز کے اندر جاری کیا جائے گا اور اگر وفاقی حکومت نیپرا کے مقرر کردہ ٹیرف کا نوٹی فکیشن مقررہ وقت میں جاری نہیں کرتی یا نظر ثانی کا نہیں کہتی تو نیپرا اپنی سفارش کے فوری اطلاق کی تجویز دے سکتا ہے جس پر وفاقی حکومت 30 روز کے اندر نیپرا کو ٹیرف پر نظر ثانی کا کہہ سکتی ہے۔

بل میںکہا گیا کہ نیپرا سہ ماہی بنیاد پر منظور شدہ ٹیرف میں ایڈجسمنٹ کر سکتی ہے جس پر وفاقی حکومت 15 روز کے اندر نظر ثانی کی ہدایت دے سکتی ہے۔یہ ایڈجسمنٹ ٹرانسمیشن چارجز، تقسیم کے نقصانات، مرمت کی مد میں کی جا سکتی ہے، نیپرا ماہانہ بنیاد پر فیول چارجز کی مد میں منظور شدہ ٹیرف میں ایڈجسمنٹ کر سکتی ہے۔اس حوالے سے قائمہ کمیٹی کی رپورٹ میں کہا گیا کہ ملک بھر میں بجلی کے یکساں ٹیرف کا نفاز ہو گا، ملک بھر میں مختلف ٹیرف وصول نہیں کیے جائیں گے۔

بل پر بات کرتے ہوئے پیپلز پارٹی کے سینیٹر رضا ربانی نے کہا کہ بل کے مطابق اتھارٹی خود سے نوٹی فکیشن جاری کر دے گی، یہ بین الاقوامی مالیاتی ادارواں کے ایما پر کیا جا رہا ہے۔انہوںنے کہاکہ نوٹی فکیشن کا حق صرف وفاقی حکومت کے پاس رہنا چاہیے۔علاوہ ازیں اجلاس کے دوران مجرمانہ معاملات پر باہمی قانونی تعاون کا ترمیمی بل اپوزیشن کی مخالفت کے باوجود کثرت رائے سے منظور کرلیا گیا۔سینٹ میں پیش کیے گئے اس ترمیمی بل پر جماعت اسلامی کے سینیٹر مشتاق احمد نے ترامیم پیش کرتے ہوئے کہا کہ 'ہم بھی چاہتے ہیں ملک ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ سے نکلے، لیکن غلامانہ قانون سازی نہیں ہونی چاہئے۔ انہوںنے کہاکہ آئین اور بنیادی حقوق کے خلاف قانون سازی نہیں ہونی چاہئے ، حکومتی ترمیم کے تحت آپ نوٹس دیئے بغیر کسی کو اٹھا لیں گے۔انہوں نے کہا کہ ریاست کو اغواگیر، ڈاکو بنایا جارہا ہے اور اس کے ذریعے شکیل آفریدی، کلبھوشن یادیو کے لیے راہ ہموار کی جارہی ہے۔انہوں نے کہا کہ میں ترمیم پیش کرتا ہوں کہ کسی پاکستانی کو بغیر نوٹس گرفتار نہ کیا جائے اور نہ ہی کسی کے حوالے کیا جائے تاہم ان کی ترمیم کثرت رائے سے مسترد کردی گئی۔بعد ازاں سینیٹر مشتاق احمد بل کی منظوری کے بعد ایوان سے واک آوٹ کر گئے۔

مجرمانہ معاملات پر باہمی قانونی تعاون کے ترمیمی بل میں کہا گیا کہ جرم سے مراد وہ جرم ہے جو تعزیرات پاکستان یا کسی اور قانون کے تحت قابل سزا ہو یا ا±س ملک کے قانون کے تحت قابل سزا ہو جس سے باہمی قانونی تعاون کیا جا رہا ہے۔کہا گیا کہ باہمی قانونی تعاون کی تمام درخواستوں پر مرکزی اتھارٹی تیزی سے عملدرآمد اور فیصلہ کرے گی اور قانون سے وہ دفعات حذف کر دی جائیں گی جس کے مطابق وفاق صوبے یا مقامی اتھارٹی سے وسائل پر اضافی بوجھ کے باعث قانونی معاونت سے انکار کر سکتے ہیں۔

اجلاس کے دوران کالعدم تنظیموں اور غیر ملکیوں کو نادرا کی جانب سے جعلی شناختی کارڈز کے اجرا پر متحدہ قومی موومنٹ کے سینیٹر فیصل سبزواری توجہ دلاو¿ نوٹس دیتے ہوئے کہ وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) کے ڈائریکٹر جنرل (ڈی جی) سندھ نے انکشاف کیا ہے کہ سندھ میں 50 فیصد نادرا اہلکاروں اور افسروں نے جعلی شناختی کارڈز بنائے ہیں۔انہوںنے کہاکہ این ڈی ایس، دشمن ایجنسی، کالعدم تنظیموں کے جعلی شناختی کارڈز بنائے گئے ہیں اور 30 سے 40 لاکھ غیر ملکیوں کے شناختی کارڈز بنائے گئے ہیں ۔انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ نادارا کے ان افراد کو بے نقاب کیا جائے اور برطرف کیا جایے جن لوگوں نے یہ کارڈ بنائے ہیں اور جعلی شناختی کارڈز بلاک کیے جائیں۔اس پر حکومتی سینیٹر علی محمد خان نے جواب دیتے ہوئے ڈی جی کا بیان ان کی زبان پھسلنا بھی ہو سکتا ہے، معلوم نہیں ایک ذمہ دار شخص ایسا بیان کیسے دے سکتا ہے۔انہوںنے کہاکہ سندھ میں 40 لاکھ جعلی شناختی کارڈز کی بات کی گئی، ہمارے ریکارڑ کے مطابق 2018 سے اب تک کراچی میں 5 لاکھ، سندھ میں 23 لاکھ سے زائد شناختی کارڈز جاری کیے گئے ہیں۔انہوں نے کہا کہ کیسے ممکن ہے کہ 40 لاکھ جعلی شناختی کارڈ جاری ہوں جب کہ کل 29 لاکھ شناختی کارڈزجاری کئے گئے ہیں تاہم پھر بھی غلط کام ہوئے ہیں۔انہوں نے کہا کہ نادرا سندھ کے 39 ملازمین کو معطل کیا گیا، علاقائی ڈی جی کو او ایس ڈی بنایا گیا اور 10 افراد کے خلاف ایف آئی آر درج کی گئی ہیں۔بعد ازاں ڈپٹی چیئرمین سینیٹ مرزا آفریدی نے معاملے کو متعلقہ قائمہ کمیٹی کے سپرد کر دیا۔