طالبان کی نیت پر شک کی کوئی وجہ نہیں، قومی مفاد کیلئے رابطے میں ہیں: ڈی جی آئی ایس پی آر

Sep 20, 2021 | 18:22:PM
طالبان کی نیت، شک، قومی مفاد،
کیپشن: ڈی جی آئی ایس پی آر، میجر جنرل بابر افتخار، فائل فوٹو

(مانیٹرنگ ڈیسک)پاکستان کی فوج کے شعبہ تعلقات عامہ کے سربراہ میجر جنرل بابر افتخار نے کہا ہے کہ پاکستان کے پاس طالبان کی افغان سرزمین کسی دوسرے ملک بشمول پاکستان کے خلاف استعمال نہ ہونے دینے کی یقین دہانیوں پر شک کی کوئی وجہ نہیں ہے۔

 ایک انٹرویو میں پاک فوج کے ترجمان میجر جنرل بابر افتخار نے کہا کہ پاکستان سلامتی یقینی بنانے کےلے طالبان کے ساتھ مسلسل رابطے میں ہے۔ایک سوال کے جواب میں میجر جنرل بابر افتخار نے کہاکہ طالبان نے کئی مواقع پر دہرایا کہ کسی گروہ یا دہشت گرد تنظیم کو کسی ملک بشمول پاکستان کے خلاف کسی دہشت گرد سرگرمی کےلئے افغان سرزمین استعمال کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ ہمارے پاس ان کی نیت پر شک کرنے کی کوئی وجہ نہیں ہے، اور اسی لیے ہم ان سے مسلسل رابطے میں ہیں تا کہ اپنے قومی مفاد کا تحفظ کر سکیں۔

 انہوںنے کہاکہ گزشتہ ماہ طالبان کے افغانستان کے دارالحکومت کابل پر کنٹرول کے بعد سے پاکستان سلامتی اور امن کیلئے عالمی برادر ی کے کردار پر زور دیتا آ رہا ہے اور اس کیلئے تمام دھڑوں پر مشتمل حکومت بنانے کا حامی ہے۔ گزشتہ ہفتے راولپنڈی میں ہونے والی ایک کور کمانڈرز کانفرنس میں بھی اس بات پر زور دیا گیا تھا کہ پائیدار امن اور استحکام کے لیے افغانستان سے تعمیری رابطے ضروری ہیں۔میجر جنرل بابر افتخارکا کہنا تھا کہ بارڈر مینجمنٹ میں مسلسل بہتری لائی جا رہی ہے اور مستقبل قریب میں اس کو مکمل طور پر محفوظ بنا دیا جائےگا’ہمارا ہمیشہ سے مقصد سرحد کے اس طرف والے حصے پر بہتر مینجمنٹ رہا ہے۔ 

انہوںنے کہاکہ پاکستان افغان سرحد پر باڑ لگانا اس خطے کی ہیئت اور دوسری مشکلات کی وجہ سے ایک بڑی زمہ داری تھی۔ انہوںنے کہاکہ تمام تر مشکلات کے باوجود پاکستان نے بارڈر کے 90 فیصد حصے پر باڑ لگانے کا کام مکمل کر لیا ہے۔ انہوںنے کہاکہ بارڈر مینجمنٹ میں مسلسل بہتری ہو رہی ہے اور ہم پر امید ہیں کہ مستقبل قریب میں اس کو مکمل طور پر محفوظ بنا دیا جائے گا۔پاکستانی افواج کے طالبان کے ہمراہ افغانستان میں لڑنے کے حوالے سے انڈین میڈیا پر چلنے والی خبروں کے بارے میں پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ جس طریقے سے انڈین میڈیا نے طالبان کے پنجشیر پر حملے کے حوالے سے خود کو پیش کیا ہے وہ اس بات کی کافی شہادت ہے کہ ان کا میڈیا جعلی خبروں اور جھوٹی گھڑی گئی کہانیوں پر پروان چڑھتا ہے۔ انہوںنے کہاکہ بین الااقوامی میڈیا کے معروف اداروں اور کچھ انڈین صحافیوں نے افغانستان کے واقعات پر انڈین میڈیا کی کوریج جس میں انہوں نے افغانستان کے اندرونی معاملات میں پاکستان کو ملوث کرنے کی ناکام کوشش کی تھی کا مذاق اڑانے کے لیے خبریں بھی چلائی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: فلیگ شپ ریفرنس: نوازشریف کی بریت کیخلاف نیب اپیل سماعت کیلئے مقرر