تحریک انصاف کو دھچکا۔۔الیکشن کمیشن نے غیر ملکی فنڈنگ کیس کی رپورٹ خفیہ رکھنے کی استدعا پھر مسترد کردی 

Jan 18, 2022 | 21:58:PM
فنڈنگ کیس۔غیر ملکی۔تحریری حکم۔مسترد۔سکروٹنی کمیٹی
کیپشن: الیکشن کمیشن آفس 
Stay tunned with 24 News HD Android App
Get it on Google Play

 (24نیوز)الیکشن کمیشن نے پی ٹی آئی کی غیر ملکی فنڈنگ کیس کی رپورٹ خفیہ رکھنے کی استدعا مسترد کرنے کا تحریری حکم نامہ جاری کرتے ہوئے مسلم لیگ (ن)اور پیپلز پارٹی کے خلاف قائم سکروٹنی کمیٹی کو 10 روز میں رپورٹ پیش کرنے کا حکم دیا ہے ۔ 

منگل کو الیکشن کمیشن نے پی ٹی آئی کی غیر ملکی فنڈنگ کیس کی رپورٹ خفیہ رکھنے کی استدعا مسترد کرنے کا تحریری حکم نامہ جاری کردیا ،پی ٹی آئی کے وکیل شاہ خاور نے رپورٹ پبلک نہ کرنے کی درخواست کی ۔ حکم نامے کے مطابق الیکشن کمیشن حیران ہے کہ ہم ایسا آرڈر کیسے جاری کر سکتے ہیں جب کہ ہمارے سامنے پیش رپورٹ پبلک دستاویز بن چکی ہے،شاہ خاور کی درخواست کو مسترد کرتے ہیں۔ ۔ الیکشن کمیشن نے کہاکہ سکروٹنی کمیٹی نے تقریباً اپنا کام مکمل کرلیا،فرخ حبیب پی ٹی آئی ممنوعہ فنڈنگ کیس میں فریق نہیں ہیں،فرخ حبیب الگ سے درخواست دائر کرسکتے ہیں۔

 ادھر چیف الیکشن کمشنر نے پی ٹی آئی فارن فنڈنگ کیس میں اسکروٹنی کمیٹی کی تشکیل نو کاحکم دیدیا ۔ منگل کو الیکشن کمیشن میں پی ٹی آئی فارن فنڈنگ کیس کی سماعت چیف الیکشن کمشنر کی سربراہی میں 3 رکنی کمیشن نے کی، پی ٹی آئی کی جانب سے سابق اٹارنی جنرل انور منصور الیکشن کمیشن میں پیش ہوئے،درخواست گزار اکبر ایس بابر بھی وکیل کے ہمراہ الیکشن کمیشن میں پیش ہوئے۔سابق اٹارنی اور وکیل پی ٹی آئی جنرل انور منصور نے کہاکہ الیکشن کمیشن کی جانب سے سیاسی جماعتوں کی اسکروٹنی خوش آئند ہے،یہ اور بات ہے کہ پی ٹی آئی کی اسکروٹنی پہلے کرلی گئی۔وکیل انور منصور خان نے کہاکہ اس اسکروٹنی کمیٹی کی رپورٹ میں کئی خامیاں ہیں،رپورٹ میں بہت سے اعداد و شمارکی سمجھ نہیں آرہی کہ کہاں سے آئے، رپورٹ میں کئی اعداد و شمار کو دہرایا گیا ہے۔وکیل پی ٹی آئی انور منصور نے الیکشن کمیشن میں کہاکہ مجھے دو دن پہلے اس کیس میں انگیج کیا گیا ہے،رپورٹ پڑھی، اس میں کچھ خامیاں ہیں،اس پرکام کرنے کی ضرورت ہے۔پی ٹی آئی وکیل نے کہاکہ مجھے وقت چاہئے، اس میں کچھ چیزیں دیکھنا چاہوں گا،ہماری کچھ غلطیاں ہیں تو ہم تسلیم کریں گے،اگر کمیٹی کی غلطیاں ہیں تو درست کی جائیں۔وکیل اکبرایس بابر نے کہاکہ اسکروٹنی کمیٹی کی رپورٹ کے کچھ حصے ہمیں نہیں دیئے گئے،چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان راجہ نے کہاکہ رپورٹ کے کچھ حصے خفیہ رکھنے کی استدعا مسترد کردی ہے، اسکروٹنی کمیٹی کا کوئی ڈاکیومنٹ خفیہ نہیں ہے۔اسکروٹنی کمیٹی کے سربراہ اسپیشل سیکریٹری الیکشن کمیشن میں پیش ہوئے اور بتایا کہ ایک ممبرکی ریٹائرمنٹ کے باعث اسکروٹنی کمیٹی غیرفعال ہوگئی ہے،پی پی پی اور نون لیگ کا کیس بھی اسی نوعیت کا ہے۔چیف الیکشن کمشنر نے کہاکہ اسکروٹنی کمیٹی کی تشکیل نو کردی جائے گی، اس موقع پر الیکشن کمیشن نے کیس کی سماعت یکم فروری تک ملتوی کردی۔

یہ بھی پڑھیں۔ خواجہ سرا کا کارنامہ۔۔کراچی کے رہائشی نے پاکستان کے پہلے ڈاکٹر بننے کا اعزاز حاصل کرلیا