عامر لیاقت کےپوسٹ مارٹم سے متعلق عدالت سے بڑی خبر آ گئی

Jun 18, 2022 | 11:52:AM
عامر لیاقت کےپوسٹ مارٹم سے متعلق عدالت سے بڑی خبر آ گئی
کیپشن: عامر لیاقت کےپوسٹ مارٹم سے متعلق دائر درخواست پرفیصلہ محفوظ
سورس: Instagram
Stay tunned with 24 News HD Android App
Get it on Google Play

(ویب ڈیسک )کراچی سٹی کورٹ میں جوڈیشل مجسٹریٹ شرقی کی عدالت میں ڈاکٹرعامر لیاقت حسین کے پوسٹ مارٹم کیلئے شہری کی دائر درخواست پر سماعت ہوئی۔عدالت میں پیش کی گئی پولیس رپورٹ میں بتایا گیا کہ جسم کے اندرونی حصوں کا جائزہ لیےبغیرموت کاتعین نہیں ہوسکتا۔سرکاری وکیل نے بتایا کہ مرحوم کے ورثاکوکسی پرشبہ نہیں اور وہ پوسٹ مارٹم کرانانہیں چاہتے ہیں۔ عدالت نےفریقین کےدلائل سننےکےبعدفیصلہ محفوظ کرلیا جو کہ کچھ دیربعدسنایاجائےگا۔

 تفصیلات کے مطابق درخواست گزار عبدالاحد کے وکیل ارسلان راجہ نے موقف اختیار کیا تھا کہ عامر لیاقت کی اچانک پراسرار موت ہوئی ہے اور معروف ٹی وی ہوسٹ اور سیاست دان تھے۔

بیرسٹر ارسلان راجہ کا کہنا تھا کہ عامر لیاقت کی اچانک موت سے ان کے مداحوں میں شکوک و شبہات ہیں اور شبہ ہے کہ عامر لیاقت کو جائیداد کے تنازع پر قتل کیا گیا ہے اور ان کے پوسٹ مارٹم کیلئے خصوصی بورڈ تشکیل دیا جائے۔

واضح رہے کہ عامر لياقت حسين کی نماز جنازہ پوليس کی جانب سے پوسٹ مارٹم کروانے کے اصرار کی وجہ سے تاخیر کا شکار ہوئی پولیس حکام کا موقف تھا کہ موت کی وجہ کاتعین نہ ہونے کی وجہ سے پوسٹ مارٹم ضروری ہے۔عامر لياقت کے اہل خانہ نے عدالت سے رجوع کيا تھا اورجوڈيشل مجسٹريٹ کے ہمراہ پوليس سرجن کی جانب سے معائنہ کرنے کے بعد ميت ورثا کے حوالے کردی تھی۔

عامر لياقت حسین  انتقال سے پہلے آخری گفتگو کس سے کی اور وہ کس سے رابطے میں  تھے پو لیس حکام نےعامر لياقت کا موبائل فون ، ٹیبلٹ، لیپ ٹاپ لے کرفارنزک کے  لیے بھیج  دیے ہیں جن کی رپورٹ 15 روز میں متوقع ہے۔اس سے قبل پولیس کی جانب سے ایک لیٹرجاری کیا تھا اور چھیپا سردخانے کی انتظامیہ سے کہا تھا کہ عامر لیاقت حسین کی میت پوليس کےعلاوہ کسی کے حوالے نہ کی جائے، پولیس نےعامر لیاقت کی میت ورثا کو دینے سے بھی روک دیا تھا۔

پولیس حکام کا کہنا تھا کہ عامر لیاقت حسین کی میت ایک معمہ بن چکی ہےاوران کی موت کے حوالے سے تاحال وضاحت نہیں مل سکی، یہ ہائی پروفائل کیس ہےاور پولیس نے اس حوالے سے مزید تحقیقات کرنی ہیں، کارروائی مکمل کرنا چاہتے ہيں۔

چھیپا ویلفئیر کے سربراہ رمضان چھیپا نے بتایا تھا کہ عامرلیاقت کی سابقہ اہلیہ پوسٹ مارٹم کے لیے نہیں مان رہی تھیں، جب کہ پولیس نے کارروائی کے لئے پوسٹ مارٹم کا کہا ہے۔

مرحوم عامر لیاقت کی میت لینے کے لئے ان کا بیٹا احمد اور بیٹی دعا سرد خانے میں پہنچے، جہاں ان کی پولیس حکام سے بات چیت ہوئی، پولیس نے انہیں پوسٹ مارٹم سے روکنے پرعدالتی احکامات پیش کرنے کا کہا، تاہم بچوں کے اصرار پر موقع پر موجود ایس ایس پی ایسٹ اورعامر لیاقت کے بچوں کے مابین اتفاق ہوا کہ عامر لیاقت حسین کا پوسٹ مارٹم نہیں ہوگا اور بچوں نے پوسٹ مارٹم نہ کرانے کے لئے حلف نامہ بھی دیا۔

سرد خانےمیں موجود ایس ایس پی ایسٹ نے اعلیٰ افسران کو اس حوالے سے آگاہ کیا تو اعلیٰ افسر کی جانب سے بچوں کا حلف نامہ لینے سے منع کردیا گیا، اعلیٰ افسر کا کہنا تھا کہ ضابطہ فوجداری کے تحت دفعہ 174 کی کارروائی کے بعد پوسٹ مارٹم لازمی ہے، صرف عدالتی حکم نامہ ہی پوسٹ مارٹم رکواسکتا ہے۔

 یاد رہے کہ عامرلیاقت حسین جمعرات 9 جون کو کراچی میں انتقال کرگئے تھے۔ عامر لیاقت حسین کو تشویشناک حالت میں اسپتال منتقل کیا گیا تھا جہاں ڈاکٹرز نے معائنے کے بعد انتقال کی تصدیق کی، جب کہ ان کے ڈرائیورجاوید نے پہلے ہی موت کی تصدیق کردی تھی۔