"جب شکست آتی ہے تو اسے ایک اشارہ سمجھیں‘‘

سلیم بخاری

Oct 05, 2022 | 23:54:PM
کہاوت، جب شکست آتی ہے، اشارہ سمجھیں،
کیپشن: آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ، عمران خان، فائل فوٹو
Stay tuned with 24 News HD Android App
Get it on Google Play

جیسا کہ کہاوت میں کہا جاتا ہے کہ "جب شکست آتی ہے تو اسے ایک اشارہ سمجھیں کہ آپ کے منصوبے درست نہیں ہیں، ان منصوبوں کو دوبارہ بنائیں، اور اپنے دوسرے مطلوبہ اہداف کی طرف پھر سے سفر کریں۔

" آپ کو اگلے چیف آف آرمی سٹاف کا تقرر کرنے کی اپنی خواہش کو ترک کرنا ہوگا۔ یا تو آپ کے ذریعے یا آپ کی مشاورت سے۔ جہاں تک اس متنازعہ مسئلے کا تعلق ہے، آپ آج اس وقت اکیلے کھڑے ہیں جب جنرل قمر جاوید باجوہ نے اپنے موجودہ سرکاری دورہ امریکہ کے دوران یہ اعلان کیا کہ ”میں اپنی موجودہ مدت پوری کرنے پر ریٹائر ہو جاؤں گا“۔

چیف آف آرمی سٹاف کے اس اعلان سے پاک فوج کے صفوں اور فائلوں میں پائی جانے والی بے چینی پر قابو پا لیا جائے گا اور ملک میں انتہائی ضروری سیاسی استحکام کی راہ ہموار ہو جائے گی۔ یہی نہیں بلکہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سربراہ عمران خان کے اس بیانیے سے گریز کرتے ہوئے بیمار قومی معیشت کی سمت کا تعین کرنا ممکن ہو گا کہ پاکستان ڈیفالٹ کے دہانے پر کھڑا ہے اور جلد ہی حالات ایسے ہوں گے۔ سری لنکا کی طرح۔

یہ مسئلہ جسے آئینی دفعات کے ذریعے حل کیا جانا ہے اور دہائیوں پرانی روایت کے مطابق اسے عدم اعتماد کے ووٹ کے ذریعے اقتدار سے ہٹائے جانے کے بعد عوامی جلسوں سے خطاب کرتے ہوئے آپ کے دعوو¿ں نے متنازعہ اور حساس بنا دیا تھا۔ آپ قبل از وقت عام انتخابات کے انعقاد اور جنرل باجوہ کی مدت ملازمت میں مزید توسیع دے کر نئے چیف آف آرمی سٹاف کی تقرری کو موخر کرنے کا مطالبہ کر رہے تھے۔ آپ انٹر سروسز پبلک ریلیشنز (آئی ایس پی آر) کے ڈائریکٹر جنرل جنرل بابر افتخار کی تین میڈیا بریفنگ میں گونگے اور بہرے رہے جس نے واضح طور پر واضح کیا کہ جنرل باجوہ مزید توسیع میں دلچسپی نہیں رکھتے اور یہ کہ وہ ایک لمحے میں بھی ریٹائر ہو جائیں گے۔

امریکہ میں جنرل باجوہ کا بیان ہمارے قارئین اور ناظرین کے فائدے کیلئے یہاں دوبارہ پیش کیا جا رہا ہے۔ "میں اپنی شرائط پوری کرنے پر ریٹائر ہو جاو¿ں گا"۔ ان کے اس بیان سے ہمیشہ کیلئے یہ واضح ہو گیا ہے کہ مسلح افواج نے خود کو سیاست سے دور کر لیا ہے اور وہ مستقبل میں بھی ایسا ہی رہنا چاہتے ہیں۔ دو ماہ میں اپنی دوسری تین سالہ مدت پوری کرنے کے بعد اپنا عہدہ چھوڑنے کے اپنے وعدے کا اعادہ کرتے ہوئے آرمی چیف نے کہا کہ وہ پہلے کیا گیا اپنا وعدہ پورا کریں گے۔

آرمی چیف کے اس دوٹوک بیان کے بعد وفاقی وزیر دفاع خواجہ آصف نے اعلان کیا ہے کہ نئے آرمی چیف کی تقرری کا عمل رواں ماہ کے آخر تک شروع کر دیا جائے گا۔ میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ نئے آرمی چیف کی تقرری کیلئے پانچ سینئر افسران کو پہلے ہی شارٹ لسٹ کیا جا چکا ہے اور کہا کہ نئے سی او اے ایس کا انتخاب ان افسران میں سے کسی میں بھی کیا جا سکتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ تمام جرنیلوں کے نام جنرل ہیڈ کوارٹر (جی ایچ کیو) کی طرف سے بھیجے جاتے ہیں اور ان تمام ناموں کا بغور جائزہ لیا جاتا ہے، انہوں نے کہا کہ عمران خان کی حالیہ تقاریر سے اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ ادارے غیر جانبدار ہو چکے ہیں۔ ہمارے ادارے، فوج، عدلیہ، پارلیمنٹ اور میڈیا آئین کے مطابق کام کر رہے ہیں۔ ادارے آئین کی روشنی میں کام کر رہے ہیں جو عمران خان کو قبول نہیں۔ وہ نومبر کے لیے دیوانہ ہو رہا ہے۔ نومبر کا مہینہ بھی پرامن گزرے گا،“ انہوں نے دعویٰ کیا۔

یہاں یہ تذکرہ ضروری ہے کہ ماضی میں تین فوجی مداخلتیں ہوئیں جن کے نتیجے میں مارشل لا لگا جس کے نتیجے میں سرکردہ سیاسی رہنماو¿ں کی گرفتاری اور ان پر ظلم و ستم ہوا لیکن کسی بھی مرحلے پر سیاسی متاثرین نے حاضر سروس جرنیلوں کے نام لینے کی کوشش نہیں کی۔

کوئی بھی یہ سوچ بھی نہیں سکتا تھا کہ وہ یا تو دراڑ پیدا کرنے کی کوشش کرے یا مسلح افواج کے صفوں اور فائلوں کو تقسیم کرنے کی کوشش کرے۔ عمران خان نے ایسا اس وقت شروع کیا جب آرمی چیف نے انٹر سروس انٹیلی جنس (آئی ایس آئی) کے اس وقت کے ڈائریکٹر جنرل کو تبدیل کرنے کا فیصلہ کیا جو ان کی صوابدید کے ساتھ ساتھ ان کے دائرہ اختیار میں بھی تھا۔ پی ٹی آئی کے سربراہ نے جو وزیر اعظم کے عہدے پر فائز تھے، اس پر ناقص بنیادوں پر اعتراض کیا۔ اس سے موجودہ حکومت اور جی ایچ کیو کے درمیان ایک طرح کی کشمکش کا آغاز ہوا جو اس تجزیہ کے لکھنے تک جاری ہے لیکن آنے والے ہفتوں میں اس کے منطقی انجام تک پہنچنے کا امکان ہے۔

صورتحال اس وقت مزید خراب ہو گئی جب فواد چوہدری، شبلی فراز، فیصل واوڈا جیسے پی ٹی آئی رہنما اور قومی اسمبلی میں ایک سیٹ ہولڈر شیخ رشید نے یہ دلائل دینا شروع کر دیے کہ مسلح افواج کے سینئر کیڈر میں تبدیلیاں کرنا وزیر اعظم کا اختیار ہے، اس طرح کے بیانات تحریک انصاف اور آرمی چیف کے درمیان اختلافات کو ہوا دینے کے مترادف تھے۔

ضرور پڑھیں :75 روپے کے نوٹ کی گنتی کیسے کریں؟

اقتدار سے باہر ہوتے ہی عمران خان اسٹیبلشمنٹ کے ان تمام احسانات کو بھول گئے جن کی وجہ سے وہ اقتدار کی راہداریوں تک پہنچے اور انہیں وزارت عظمیٰ کے سب سے من پسند عہدے کی کاٹھی میں بسایا۔ ان تمام کارروائیوں کا تذکرہ کرنے کی ضرورت نہیں جن میں متعلقہ سیاسی جماعتوں کے پولنگ ایجنٹس کو فارم 45 کی کاپیاں فراہم نہ کرکے انتخابی نتائج میں تاخیر اور تدبیریں شامل ہیں۔

ایک بار جب نئے چیف آف آرمی سٹاف کا تقرر ہو جاتا ہے اور بیٹھے ہوئے جرنیلوں کی طرف انگلیاں اٹھانے کا سلسلہ رک جاتا ہے تو پی ٹی آئی کیلئے صورتحال بالکل مختلف ہو جائے گی۔ پی ٹی آئی نے پہلے ہی PDM حکومت کے ریڈ زون اور بالعموم دارالحکومت کی حفاظت کے لیے فوج کے دستے تعینات کرنے کے فیصلے سے محسوس کرنا شروع کر دیا ہے۔

اسی طرح، حکومت نومبر 2023 میں ہونے والے عام انتخابات سے پہلے پی ٹی آئی کے مطالبے پر کان نہیں دھرے گی۔ جناب عمران خان کا منظر نامہ یکسر بدلنے والا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: ڈالر24 دن میں 24 روپے کم ہو سکتا ہے،اسحاق ڈار